Article

المعتصم باللہ وفات 5 جنوری 842

ابو اسحاق محمد بن ہارون رشید (عربی: أبو إسحاق محمد بن هارون الرشيد) جو عام اپنے لقب معتصم باللہ (عربی: المعتصم بالله) کے نام سے جانے جاتے ہیں خلافت عباسیہ کا آٹھویں خلیفہ تھا جس کا دور خلافت 833ء سے 842ء میں اپنی موت تک رہا۔ بمطابق ہجری تقویم 218ہجری میں تخت نشیں ہوا اور بدستور 227ہجری تک خلیفہ رہا۔ اُس کے عہدِ خلافت میں مسئلہ خلق قرآن کے فتنے کا عروج رہا۔
نام و کنیت / لقب
نام محمد بن ہارون الرشید ہے۔ کنیت ابو اسحاق اور لقب المعتصم باللہ العباسی ہے۔ مورخین نے اِسے المعتصم باللہ کے نام سے پکارا ہے۔
ولادت
المعتصم کی ولادت بروز پیر 10 شعبان 180ھ مطابق 17 اکتوبر 796ء کو بغداد کے خلد محل میں ہوئی۔ اُس وقت المعتصم کا باپ ہارون الرشید بحیثیتِ خلیفہ تھا اور ہارون الرشید کے عہدِ حکومت کے دسویں سال المعتصم باللہ کی ولادت ہوئی۔
حلیہ
المعتصم باللہ کا رنگ سفید سرخی مائل تھا جبکہ داڑھی گھنی تھی۔ قد متوسط تھا۔
تعلیم و تربیت
عباسی خلیفہ ہارون الرشید المعتصم کو بہت چاہتا تھا۔ اِسی چاہت کے سبب ایک تعلیم یافتہ غلام ہر وقت المعتصم کے ساتھ رہتا جو اُسے پڑھاتا رہتا۔ جب وہ غلام فوت ہوگیا تو ہارون الرشید نے کہا: محمد! ( المعتصم کا اصلی نام محمد ہے) اب تمہارا غلام بھی مرگیا، اب بتلاو۔ المعتصم نے کہا: ہاں! وہ مرگیا، اور میں کتاب کی بلاء سے چھوٹ گیا۔ بعد ازاں وہ تعلیم سے بہرہ مند نہ ہو سکا اور اَن پڑھ ہی رہا۔ کہا جاتا ہے کہ وہ کچھ کچھ پڑھ لیتا تھا اور اِسی قدر لکھ بھی لیتا تھا مگر بہ نسبت دوسرے خلفاء کے وہ غیر تعلیم یافتہ ہی رہا۔

ہارون الرشید، امین الرشید اور مامون الرشید کے عہد حکومت میں
المعتصم ہارون الرشید کی وفات کے وقت صرف 13 سال کا تھا ۔ 809ء میں جب امین الرشید برسر اِقتدار آیا تو المعتصم شاہی محل میں امین الرشید کی کفالت میں رہا۔ 813ء میں جب مامون الرشید خلیفہ بن کر بغداد میں داخل ہوا تو تب المعتصم 17 سال کا تھا۔ المعتصم بڑا قوی اور شجاع تھا، علاوہ اَزیں وہ صاحب معلومات بھی تھا۔ مامون الرشید اُسے اُس کی شجاعت کی بناء پر دل لگاو کے سبب ساتھ رکھا کرتا تھا۔ مامون الرشید نے المعتصم کو شام اور مصر کا والی مقرر کردیا ۔ اِسی شجاعت و عظمت کے سبب مامون الرشید نے اپنے بیٹے عباس کو خلافت سے محروم کرتے ہوئے المعتصم کو ولی عہد مقرر کیا۔

خلافت اور تخت نشینی
جمعرات 18رجب218ھ مطابق 7 اگست833ء کو عباسی خلیفہ مامون الرشید نے اِنتقال کیا تو طرطوس میں ہی اُمرائے حکومت نے مامون الرشید کی ولی عہدی کے مطابق المعتصم کی بیعت کرلی مگر لشکریوں یعنی افواج نے شورو غوغا کیا کہ مامون الرشید کے بیٹے عباس بن مامون الرشید کو بحیثیتِ خلیفہ تخت نشیں کیا جائے۔ المعتصم نے عباس بن مامون الرشید کو دربارِ شاہی میں طلب کیا۔ عباس نے حاضر ہوکر بطیب خاطر اپنے چچا المعتصم کی بیعت کرلی تو شاہی افواج میں مچا ہنگامہ ختم ہوگیا۔

قلعہ طوانہ کی اِنہدامی
مامون الرشید نے طوانہ کی جس قلعہ بندی کا حکم اپنے اواخر ایام میں دیا تھا ۔ المعتصم نے اُسے اِسی حالت میں منہدم کردینے کا حکم دے دیا۔ اُس کی وجہ سے وہاں جس قدر اسلحہ اور دوسرا سازو سامان جمع کر لیا گیا تھا اُس میں سے جو بار کرکے لایا جاسکا وہ لے آیا۔ اور باقی کو جلا دیا گیا اور جن لوگوں کو مامون الرشید نے وہاں آباد کیا تھا، اُنہیں اپنے اپنے وطن جانے کی اجازت دے دی گئی۔ یہ واقعہ ماہِ شعبان 218ھ میں ہوا۔

بابک خرمدین کا انجام
مامون الرشید نے مرتے وقت المعتصم کو وصیت کی تھی کہ خرمیوں سے غفلت نہ کرنا ورنہ اُن کا فتنہ بہت خطرناک ہے۔ 218ھ مطابق 833ء میں ہی اصفہان، ہمدان، ماسیزان اور مہرجانقذق کے ہزارہا پہاڑی باشندے بابک خرمدین کے مذہب میں داخل ہوگئے۔ اور سب نے مجتمع ہوکر ہمدان کے علاقہ میں علم بغاوت بلند کردیا۔ المعتصم نے اِن کے مقابلے میں بہت سی افواج روانہ کیں۔ آخری فوج اسحاق بن ابراہیم بن مصعب کی امارت میں اِس سال ماہِ شوال میں روانہ کی گئی اور اسحاق بن ابراہیم کو تمام علاقہ جبال کا امیر بھی مقرر کردیا گیا تھا۔ اسحاق بن ابراہیم ماہِ ذیقعد میں اِس جماعت کے مقابلہ پر روانہ ہوا اور 8 ذوالحجہ کو اِس فتح کا مراسلہ بشارت بغداد میں پڑھا گیا۔ صرف ہمدان کے علاقہ میں اُس نے ساٹھ ہزار مرتدین کو جو بابک خرمدین کے پیروکار بن گئے تھے، قتل کردیا گیا۔ باقی خرمی رومی علاقوں کو بھاگ نکلے۔ اتوار 11 جمادی الاول 219ھ مطابق 24 مئی 834ء کو اسحاق بن ابراہیم علاقہ جبال سے خرمیوں اور دوسرے اَمان حاصل کردہ قیدیوں کے ساتھ بغداد آیا۔ خواتین اور بچوں کو چھوڑ کر اسحاق بن ابراہیم نے خرمیوں کی اِن تمام لڑائیوں میں اُن کے تقریباً ایک لاکھ آدمی قتل کردئیے تھے۔

221ھ میں ایک بار پھر خرمیوں کا فتنہ عروج کو پہنچ گیا تو المعتصم نے اپنے سب سے بڑے ترکی سپہ سالار افشین کو بابک خرمدین کی مہم پر متعین کرنا چاہا ۔ اُس کی روانگی سے قبل ہی ابو سعید محمد بن یوسف کو اردبیل بھیجا تاکہ وہ اُن قلعوں کی مرمت کروائے جو خرمیوں کے ہاتھوں تباہ ہوئے تھے۔ اِس اثناء میں بابک خرمدین اور اُس کے خرمی سردار عصمت نے متعدد حملے کیے۔ ابوسعید محمد بن یوسف نے اُنہیں ہر حملے میں شکست دی۔

عباسی ترکی سپہ سالار افشین اور بابک خرمدین کے درمیان عرصہ مدید تک معرکے ہوتے رہے۔ افشین بھاری کمک لے کر اُس کے مقابلے کو روانہ ہوا۔ بابک خرمدین کو معلوم ہوا تو وہ شب خون مارنے کو نکلا۔ افشین کو اِس کی خبر ہوگئی اور اُس نے اپنی حسن تدبیر سے بفاء الکبیر کو وہاں سے نکال لیا اور بابک خرمدین کا مقابلہ ترکی سپہ سالار ہشیم سے ہوگیا۔ ہشیم کو مقابلہ میں ناکامی ہوئی تو افشین نے بابک خرمدین کے عقب سے حملہ کردیا۔ بابک خرمدین کی تمام فوج اِس معرکہ میں کام آگئی۔ بابک خرمدین بے سرو سامانی کے عالم میں معدودے چندے افراد کے ہمراہ وہاں سے بھاگا تو شہر موقان پہنچا۔ وہاں بقیہ لشکر کو لے کر مقام بد پر آ پہنچا۔ ماہِ ربیع الاول 222ھ مطابق فروری/مارچ837ء کو افشین نے بابک خرمدین کے مرکزی مقام ” بد ” پر حملہ کردیا اور کافی تاخت و تاراج کی۔

بغداد میں المعتصم نے جعفر خیاط کی سرکردگی میں ایک عظیم الشان لشکر مع تیس لاکھ درہم مصارف فوج دے کر روانہ کیا۔ فریقین میں سخت خونریزی ہوئی۔ آخر کار افشین اور جعفر خیاط کی مشترکہ فوج غالب آگئی اور مقام ” بد ” میں داخل ہوگئی۔ محلات میں آگ لگا دی گئی۔ بابک خرمدین یہاں سے بھاگ نکلا۔ ابو الساج نے اُس کا تعاقب کیا۔ بابک خرمدین کی ماں اور اُس کا بھائی معاویہ گرفتار کر لیے گئے۔ بابک خرمدین جبال آرمینیاء میں جا چھپا۔ افشین کے جاسوس اُس کے تعاقب میں پیچھے پیچھے تھے۔ سہل بن سباط نے بابک خرمدین کو دیکھ لیا تو اُس کی تعظیم و تکریم کے بہانے میں اُسے اپنے قلعہ میں لا کر رکھا اور اِس کی خبر افشین کو دے دی۔ دوسرے دن شکار کے بہانے بابک خرمدین کو جنگل میں لا کر افشین کے سپہ سالاروں کے ہاتھ گرفتار کروا دیا۔ بابک خرمدین افشینکے سامنے پیش کیا گیا۔ اُس نے اِسے قید خانہ بھجوا دیا۔ اِس خدمت کے صلہ میں سہل بن سباط کو ایک لاکھ درہم اور اُس کے بیٹے معاویہ بن سہل کو ایک ہزار درہم دئیے گئے اور سہل بن سباط کو جواہرات سے مرصع ایک پیٹی کمربند کی دی گئی۔ افشین نے تمام رُوداد المعتصم کے حضور بھیجی۔ خلیفہ نے افشین کو سامرا طلب کیا۔ ماہِ شوال 222ھ مطابق ستمبر/اکتوبر 837ء کو افشین مقام برزند سے سامرا کو روانہ ہوا۔ ہر منزل پر خلیفہ کے حکم سے افشین کی کمالِ عزت افزائی کی جاتی۔ ایک قاصد خاص خلیفہ کا معہ خلعتِ فاخرہ اور ایک راس عربی گھوڑے کے افشین سے ملتا۔ جس وقت افشین سامرا پہنچا تو ولی عہد شہزادہ الواثق باللہ مع سرداران اور اراکین سلطنت کے اِستقبال کو آیا اور کمال توقیر سے قصر شاہی ” مطیرہ ” میں ٹھہرایا۔ اور اِسی قصر شاہی میں بابک خرمدین کو بھی رکھا گیا۔خلیفہ المعتصم کے حکم سے افشین کے سر پر تاج رکھا گیا۔ اور قیمتی خلعت پہنائی گئی۔ بیس لاکھ درہم بطور صلہ مرحمت کی گئے اور دس لاکھ درہم لشکریوں میں تقسیم کیے گئے۔ پیر 7 صفر [[[223ھ]]] مطابق 7 جنوری 838ء کو خلیفہ کے حکم کے مطابق بابک خرمدین کو دربارِ شاہی میں طلب کیا گیا اور اُس کے ہاتھ پیر کاٹ دینے کا حکم جاری ہوا۔ فوراً حکم کی تعمیل ہوئی اور بابک خرمدین کا سر خراسان بھیج دیا گیا اور بقیہ لاش کو سامرا میں صلیب پر چڑھا دیا گیا۔ بابک خرمدین کے پنجہ ظلم سے 60 ہزار 600 مسلمان خواتین اور اُن کو بچوں کو حالت یرغمالی سے آزاد کروایا گیا۔ اُس کے بھائی عبداللہ کو بغداد میں صلیب پر چڑھا دیا گیا۔

علویوں کا دعویٰ خلافت
المعتصم کے عہد میں اہل بیت کے سربراہ محمد بن القاسم بن علی بن عمر بن علی زین العابدین بن حسین بن علی بن ابی طالب تھے۔ محمد بن القاسم مدینہ منورہ میں رہا کرتے تھے۔ بہت عابد و زاہد اور نیک سیرت مشہور تھے۔ امامیہ شیعہ فرقہ کے نویں امام محمد تقی المعروف بہ محمد الجواد 24 سال کی عمر میں 30 ذیقعد 220ھ مطابق 29 نومبر 835ء کو بغداد میں فوت ہوئے۔ اُن کے نکاح میں مامون الرشید کی بیٹی ام الفضل تھی۔ جب امام موصوف فوت ہوئے تو ام الفضل واپس شاہی محل بغداد میں اپنے چچا المعتصم کے پاس آ گئی اور یہیں رہنے لگی۔ اہل بیت کے بزرگ محمد تقی فوت ہوئے تو شیعوں نے اُن کے سات سالہ بیٹے علی نقی کو اپنا اِمام قرار دیا۔ زیدیہ جماعت نے محمد بن القاسم کو اپنا اِمام بنالیا۔ ایک فتنہ پرور خراسانی مدینہ منورہ آیا تو وہ محمد بن القاسم کے یہاں مدینہ منورہ میں اُن کے پاس ہی رہنے لگا۔ اُس نے یہ خیال محمد بن القاسم کے ذہن میں مستحکم کردیا کہ ” آپ ہی مستحق خلافت ہیں”۔ جو لوگ خراسان سے حج کرنے آئے اُن کو امام موصوف کے پاس لا کر بیعت کروائی۔ پھر تو کچھ عرصہ بعد معتقدین کی کثرت ہوتی گئی۔ وہ خراسانی امام محمد بن القاسم کو لے کر جرجان چلا گیا اور مصلحتاً کچھ روز روپوش رہے۔ جب روساء اور اُمراء نے بھی بیعت کرلی تو اُس نے امام محمد بن القاسم کو ظہور کی رائے دی اور لوگوں کو علانیہ ” رضاء من آل محمد ” کی دعوت دینے لگا۔ عبداللہ بن طاہر نے اِس طوفان بغاوت کو روکنے کی طرف توجہ دی۔ طالقان کے اطراف میں متعدد لڑائیاں لڑی گئیں اور ہر لڑائی میں امام محمد بن القاسم کو ہزیمت اُٹھانا پڑی۔ آخر امام محمد بن القاسم پیچھے ہٹ گئے اور شہر نساء چلے گئے ۔ وہاں پہنچے تو نساء کے عامل نے اُنہیں گرفتار کرکے عبداللہ بن طاہر کے پاس بھیج دیا۔ عبداللہ بن طاہر نے اِنہیں بغداد المعتصم کے پاس پہنچا دیا۔ یہ ماہِ ربیع الثانی 219ھ مطابق اپریل/مئی834ء کو المعتصم کے سامنے حاضر کیے گئے۔ المعتصم نے اِنہیں مسرور الکبیر یعںی خلیفہ ہارون الرشید کے خدمت گار کے پاس سامرا میں قید کروا دیا۔ جس مقام پر قید کیا گیا اُس کی وسعت تین گز لمبی تھی اور دو گز چوڑی تھی۔ تین دن اِس کوٹھڑی میں رکھا گیا بعد ازاں بیڑ حجرے میں منتقل کردیا گیا اور کھانا بھی جاری رہا مگر پہرہ بٹھا دیا گیا۔ عید الفطر کی شب 9 اکتوبر834ء کو محمد بن القاسم روشندان کی راسی کے ذریعہ سے روشندان تک چڑھ کر قید خانے سے فرار ہوئے۔ جب قید خانہ کے خادم صبح کھانا لے کر پہنچے تو وہ غائب ہوچکے تھے۔ حکومتی اعلان کے مطابق اُن کی نشاندہی کرنے والے کو ایک لاکھ درہم اِنعام دینے کا وعدہ کیاگیا، منادیوں نے منادی کی مگر اُن کا قطعی پتہ نہ چلا۔ محمد بن القاسم یوں غائب ہوئے کہ وہ پھر دوبارہ منظر عام پر نہیں آ سکے۔ شیعوں کی زیدیہ جماعت اُنہیں امام مہدی کہتی ہے کہ زندہ غائب ہوگئے ہیں۔ امام محمد بن القاسم کے غائب ہوتے ہی اُن کے پیروکاروں کی تعداد منتشر ہوگئی۔

المعتصم باللہ بحیثیتِ خلیفہ و حکمران
مامون الرشید کے زمانہ حکومت میں جو نظامِ سلطنت قائم ہوا تھا، المعتصم نے اُسی کو برقرا رکھا البتہ اُس نے فوج کے نظام کو بہت تقویت و ترقی دی۔ اِسی ترقی و تقویت سے اُسے کثیر فتوحات کا موقع بھی ملا۔ اِسی نظام کے بدولت اُس نے بادشاہانِ آذربائیجان، طبرستان، سیستان، اشیاصح، فرغانہ، طخارستان، صفہ اور شاہِ کابل کو بھی قید کیا۔ مغیرہ بن محمد کہتے ہیں کہ جتنے بادشاہ المعتصم کے دروازے پر جمع ہوئے ، کبھی کسی بادشاہ کے وقت میں جمع نہ ہوئے تھے۔

فتنہ خلق قرآن
المعتصم باللہ کے عہد کی اولیات
المعتصم پہلا بادشاہ ہے جس کے عہدِ حکومت میں باورچی خانہ کا خرچ دن دونا رات چوگنا ہوگیا حتیٰ کہ ایک ہزار دِینار روزانہ کا خرچ ہوگیا تھا۔

المعتصم باللہ اور آٹھ کا ہندسہ
المعتصم باللہ کو مثمن بھی کہا جاتا ہے کیونکہ 8 کا ہندسہ اُس کی شخصیت کے ساتھ لازم و ملزوم ہوچکا تھا :

وہ بنو عباس کا آٹھواں خلیفہ تھا۔ اُس کی ولادت برج عقرب میں ہوئی جو دائرۃ البروج کا آٹھواں برج ہے۔ ہارون الرشید کی آٹھویں اولاد تھا۔ اُس نے 8 سال 8 ماہ 8 یوم حکومت کی۔ 180ھ میں پیدا ہوا جس میں 8 کا ہندسہ نمایاں ہے یعنی کہ دوسری صدی ہجری کا آٹھواں عشرہ۔ 218ھ میں تخت نشیں ہوا اِس میں بھی 8 کا ہندسہ نمایاں ہے۔ 8 فتوحات کیں جن میں وہ کامیاب ہوا۔ 8 بڑے دشمنوں کوقتل کیا۔اپنی وفات کے بعد 8 لڑکے اور 8 لڑکیاں پیچھے چھوڑیں۔ 8محل تعمیر کروائے اور 8 سرائیں بنوائیں۔ 8 لاکھ دینار سرخ اور 8 لاکھ درہم سفید چھوڑے۔ 8 ہزار گھوڑے اور 8 ہزار غلام اور 8 ہزار لونڈیاں متروکہ چھوڑا۔

آخری ایام اور وفات
یکم محرم الحرام 227ھ کو المعتصم کی بیماری کا آغاز ہوا۔ مرض الموت میں وہ یہ آیت تلاوت کرتا رہا: حَتّٰی اِذَا فَرِحُوْا بِمَا اُوْتُوْا اَخَذْنَا ھُمْ بَغْتَۃً ۔ حالت نزع میں کہتا جاتا تھا کہ: ” تمام حیلے جاتے رہے اب کوئی باقی نہیں رہا۔ کبھی یہ کہنے لگتا : ” مجھے اِن لوگوں میں سے نکال لے چلو”۔ آخری دعاء جو اُس نے کی وہ یہ تھی کہ: ” اِلہ العالمین تو خوب جانتا ہے کہ میں تجھ سے نہیں بلکہ اپنے آپ سے ڈرتا تھا ۔ تجھ سے اُمید رکھتا تھا، اپنے سے نہیں”۔ آخر بروز جمعرات 18 ربیع الاول227ھ مطابق 5 جنوری 842ء کو 45 سال کی عمر میں المعتصم اپنے ہی تعمیر کردہ دار الحکومت سامرا میں فوت ہوا۔

79 views

Leave a reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

cool good eh love2 cute confused notgood numb disgusting fail